Baja Keh Aankh Mein Neendon Ke Silsilay Bhi

Baja Keh Aankh Mein Neendon Ke Silsilay Bhi

Baja Keh Aankh Mein Neendon Ke Silsilay Bhi Nahi

Shikast khwab ke ab mujh mein hausale bhi nahi

Nahi nahi yeh khabar dushamno ne di ho gi
Woh aaye aa kay chale bhi gaye mile bhi nahi
 
Yeh kon log andheron ki baat karte hain
Abhi to chand teri yaad ke dhale bhi nahi

Abhi se mere rafugar ke hath thakne lage
Abhi to chak mere zakhm ke silay bhi nahi

Khafa agarcha hamesha hoye magar ab ke
Wo barihmi hai keh hum se unhein gale bhi nahi

Baja keh aankh mein neendon ke silsilay bhi nahi
Shikast khwab ke ab mujh mein hausale bhi nahi
غزل
بجا کہ آنکھ میں نیندوں کے سلسلے بھی نہیں
شکست خواب کے اب مجھ میں حوصلے بھی نہیں

نہیں نہیں یہ خبر دشمنوں کو نے دی ہوگئی
وہ آئے آ کے چلے بھی گئے ملے بھی نہیں

یہ کون لوگ اندھیروں کی بات کرتے ہیں
ابھی تو چاند تری یاد کے ڈھلے بھی نہیں

ابھی سے میرے رفوگر کے ہاتھ تھکنے لگے
ابھی تو چاک مرے زخم کے سلے بھی نہیں

خفا اگرچہ ہمیشہ ہوئے مگر اب کے
وہ برہمی ہے کہ ہم سے اُنہیں گلے بھی نہیں

بجا کہ آنکھ میں نیندوں کے سلسلے بھی نہیں
شکست خواب کے اب مجھ میں حوصلے بھی نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں