Baat Barh Sakti Thi Go, Hum Ne Barhai Kam Thi

Baat Barh Sakti Thi Go, Hum Ne Barhai Kam Thi

Baat Barh Sakti Thi Go, Hum Ne Barhai Kam Thi
Shikway kafi thay talkh nawai kam thi

Kar-e-duniya tu bohat saray mere smanay thay
Mein ne bas ishq chuna uss mein burai kam thi

Khoo diya teri talab ko bhi tere wasal ke saath
Kharch tha dhair mere aur kamai kam thi

Faisla kaisay mere haq mein sunaya jata
Meri ewaan-e- mohabbat mein rasai kam thi

Umaren do chaar bhi hotein tu yahen lag jaten
Bhool jane ko tujhe aik dahai kam thi

Ji agar aobnay lag jaye to herat kaisi
Maktab-e-ishq mein ab yun bhi parhai kam thi

Masnad mera junoon mana nahi logon ne
Chout halki thi bohat aabla pai kam thi

Baat barh sakti thi go, hum ne barhai kam thi
Shikway kafi thay talkh nawai kam thi
غزل
بات بڑھ سکتی تھی گو، ہم نے بڑھائی کم تھی
شکوے کافی تھے مگر تلخ نوائی کم تھی

کارِ دنیا تو بہت سارے مرے سامنے تھے
میں نے بس عشق چُنا، اُس میں برائی کم تھی

کھو دیا تیری طلب کو بھی ترے وصل کے ساتھ
خرچ تھا ڈھیر مرا اور کمائی کم تھی

فیصلہ کیسے میرے حق میں سنایا جاتا
میری ایوانِ محبت میں رسائی کم تھی

عمریں دو چار بھی ہوتیں تو یہیں لگ جاتیں
بھول جانے کو تجھے ایک دہائی کم تھی

جی اگر اوبنے لگ جائے تو حیرت کیسی
مکتبِ عشق میں اب یوں بھی پڑھائی کم تھی

مستند میرا جنوں مانا نہیں لوگوں نے
چوٹ ہلکی تھی بہت، آبلہ پائی کم تھی

بات بڑھ سکتی تھی گو، ہم نے بڑھائی کم تھی
شکوے کافی تھے مگر تلخ نوائی کم تھی
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں