Apne Be Noor Charaghon Ko Ziyaa Di Jaye

Apne Be Noor Charaghon Ko Ziyaa Di Jaye

Apne Be Noor Charaghon Ko Ziyaa Di Jaye
Na keh humsay ki qandeel bhuja di jaye

Har ufaq se meri awaz palat ati hai
Kis dareche se unhe ja ke sada di jaye

Ek afsana hain hatoon se garibanoon tak
Bat behroon ko suna kar na gawaan di jaye

Jin ko be qoot-e-maraat ne bakhsha tha junon
Un par kuch qeed-e- sharafat bhe laga di jaye

inqilabat hain khud apne usoolon ka jawaz
Ab ke ayeen mein shiq bhe parha di jaye

Qabar ke chuktten khali hain unhain mat bholo
Jane kab kon si tasweer laga di jaye

Apne be noor charaghon ko ziyaa di jaye
Na keh humsay ki qandeel bhuja di jaye
غزل
اپنے بے نور چراغوں کو ضیا دی جائے
نہ کہ ہمسائے کی قندیل بجھا دی جائے

ہر افق سے مری آواز پلٹ آتی ہے
کس دریچے سے انہیں جا کے صدا دی جائے

ایک افسانہ ہے ہاتھوں سے گریبانوں تک
بات بہروں کو سنا کر نہ گنوا دی جائے

جن کو بے قوت مراعات نے بخشا تھا جنوں
ان پر کچھ قیدِ شرافت بھی لگا دی جائے

انقلابات ہیں خود اپنے اصولوں کا جواز
اب کے آئین میں شق بھی پڑھا دی جائے

قبر کے چوکھٹے خالی ہیں انھیں مت بھولو
جانے کب کون سی تصویر لگادی جائے

اپنے بے نور چراغوں کو ضیا دی جائے
نہ کہ ہمسائے کی قندیل بجھا دی جائے

اپنا تبصرہ بھیجیں