Anwar Shaoor Din Mein Kahin Raat Mein Kahin

Anwar Shaoor Din Mein Kahin Raat Mein Kahin

Anwar Shaoor Din Mein Kahin Raat Mein Kahin
Rehta hai khoar shahr kharabat mein kahin

Aaye hazar bar bulane ke baad aur
Gum ho gaye woh apne khayalat mein kahin

Mumkin hai bada khane gaye hoon janab sheikh
Ghar se nikal gaye hain woh barsat mein kahin

Hum muntazir hain aur bholaye hoye hain woh
Kia guftagu hoi thi mulaqat mein kahin

Milte hain roz bar mein hum asar ta isha
Jate nahi wahan se un awqat mein kahin

Goo sakht na gawar hai ghar bethna hamein
Kia jayen iss kharabi halat mein kahin

Anwar shaoor din mein kahin raat mein kahin
Rehta hai khoar shahr kharabat mein kahin
غزل
انور شعور دن میں کہیں رات میں کہیں
رہتا ہے خوار شہر خرابات میں کہیں

آئے ہزار بار بلانے کے بعد اور
گم ہو گئے وہ اپنے خیالات میں کہیں

ممکن ہے بادہ خانے گئے ہوں جناب شیخ
گھر سے نکل گئے ہیں وہ برسات میں کہیں

ہم منتظر ہیں اور بھلائے ہوئے ہیں وہ
کیا گفتگو ہوئی تھی ملاقات میں کہیں

ملتے ہیں روز بار میں ہم عصر تا عشا
جاتے نہیں وہاں سے ان اوقات میں کہیں

گو سخت نا گوار ہے گھر بیٹھنا ہمیں
کیا جائیں اِس خرابی حالات میں کہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں