Ab shauq se ki jaan se guzar jaana chahiye

اب شوق سے کہ جاں سے گزر جانا چاہیئے
بول اے ہوائے شہر کدھر جانا چاہیئے
کب تک اسی کو آخری منزل کہیں گے ہم
کوئے مراد سے بھی ادھر جانا چاہیئے
وہ وقت آ گیا ہے کہ ساحل کو چھوڑ کر
گہرے سمندروں میں اتر جانا چاہیئے
اب رفتگاں کی بات نہیں کارواں کی ہے
جس سمت بھی ہو گرد سفر جانا چاہیئے
کچھ تو ثبوت خون تمنا کہیں ملے
ہے دل تہی تو آنکھ کو بھر جانا چاہیئے
یا اپنی خواہشوں کو مقدس نہ جانتے
یا خواہشوں کے ساتھ ہی مر جانا چاہیئے
ab shauq se ke jaan se guzar jaana chahiye
bol ai hawa-e-shahr kidhar jaana chahiye

kab tak isi ko aakhiri manzil kahenge hum
ku-e-murad se bhi udhar jaana chahiye

wo waqt aa gaya hai ki sahil ko chhod kar
gahre samundaron mein utar jaana chahiye

ab raftagan ki baat nahin karwan ki hai
jis samt bhi ho gard-e-safar jaana chahiye

kuchh to subut-e-khun-e-tamanna kahin mile
hai dil tahi to aankh ko bhar jaana chahiye

ya apni khwahishon ko muqaddas na jaante
ya khwahishon ke sath hi mar jaana chahiye

اپنا تبصرہ بھیجیں