Ab Bhala Chor Ke Ghar Kya Karte| Parveen Shakir

Ab Bhala Chor Ke Ghar Kya Karte| Parveen Shakir

Ab Bhala Chor Ke Ghar Kya Karte
Sham ke waqt safar kia karte

Teri masroofiyaten jante hain
Apne aane ki khabar kia karte

Jab sitare hi nahi mil paye
Le ke hum shams-o-qamar kia karte

Woh musafar hi khuli dhoop ka tha
Saye phela ke shajar kia karte

Khak hi awal-o-akhir thehri
Kar ke zarray ko geher kia karte

Raye pehle se bana li tou ne
Dil mein ab hum tere ghar kia karte

Ishq ne sare saleeqe bakhshe
Husan se kasab hunar kia karte

Ab bhala chor ke ghar kya karte
Sham ke waqt safar kia karte
غزل
اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے
شام کے وقت سفر کیا کرتے

تیری مصروفیتیں جانتے ہیں
اپنے آنے کی خبر کیا کرتے

جب ستارے ہی نہیں مل پائے
لے کے ہم شمس و قمر کیا کرتے

وہ مسافر ہی کھلی دھوپ کا تھا
سائے پھیلا کے شجر کیا کرتے

خاک ہی اول و آخر ٹھہری
کرکے ذرے کو گہر کیا کرتے

رائے پہلے سے بنا لی تو نے
دل میں اب ہم ترے گھر کیا کرتے

عشق نے سارے سلیقے بخشے
حسن سے کسب ہنر کیا کرتے

اب بھلا چھوڑ کے گھر کیا کرتے
شام کے وقت سفر کیا کرتے

اپنا تبصرہ بھیجیں