Aawaz Ke Hum Rah Sarapa Bhi Tou Dekhon

Aawaz Ke Hum Rah Sarapa Bhi Tou Dekhon

Aawaz Ke Hum Rah Sarapa Bhi Tou Dekhon
Aa jaan sukhan mein tera chehra bhi tu dekhon

Dastak tu kuch aisi hai keh dil chhune lagi hai
Iss habas mein barish ka yeh jhunka bhi tu dekhon

Sahra ki tarah rahte hoye thak gayin aankhen
Dukh kehta hai mein ab koi darya bhi tu dekhon

Yeh kia keh woh jab chahe mujhe chheen le mujh se
Apne lye woh shakhs tarapta bhi tu dekhon

Ab tak tu mere shair hawala rahe tera
Ab mein teri rooswai ka charcha bhi tu dekhon

Ab tak jo sarab aaye thay anjane mein aaye
Pehchane hoye raston ka dhuka bhi tu dekhon

Aawaz ke hum rah sarapa bhi tou dekhon
Aa jaan sukhan mein tera chehra bhi tu dekhon
غزل
آواز کے ہمراہ سراپا بھی تو دیکھوں
اے جان سخن میں تیرا چہرہ بھی تو دیکھوں

دستک تو کچھ ایسی ہے کہ دل چھونے لگی ہے
اس حبس میں بارش کا یہ جھونکا بھی تو دیکھوں

صحرا کی طرح رہتے ہوئے تھک گئیں آنکھیں
دکھ کہتا ہے میں اب کوئی دریا بھی تو دیکھوں

یہ کیا کہ وہ جب چاہے مجھے چھین لے مجھ سے
اپنے لئے وہ شخص تڑپتا بھی تو دیکھوں

اب تک تو مرے شعر حوالہ رہے تیرا
اب میں تری رسوائی کا چرچا بھی تو دیکھوں

اب تک جو سراب آئے تھے انجانے میں آئے
پہچانے ہوئے رستوں کا دھوکا بھی تو دیکھوں

آواز کے ہمراہ سراپا بھی تو دیکھوں
اے جان سخن میں تیرا چہرہ بھی تو دیکھوں

اپنا تبصرہ بھیجیں