Teri Qaid Se Mein Yunhi Riha Nahi Ho Raha Shayari

Teri Qaid Se Mein Yunhi Riha Nahi Ho Raha Shayari

Teri Qaid Se Mein Yunhi Riha Nahi Ho Raha
Meri zindagi tera haq ada nahi ho raha

Tere jeete jagtay aur koi mere dil mein hai
Mere dost kiya yeh bohat bura nahi ho raha

Mera mausamon se to phir gala hi fazool hai
Tujhe chho ke bhi mein agar hara nahi ho raha

Koi sher hai jo mein chaah kar bhi nah likh saka
Koi waqia hai jo ronoma nahi ho raha

Yeh jo dagmagane lagi hai tere diye ki lo
Usay mujh se to koi masla nahi ho raha

Mujhe ilm hai keh shagaf hai meri nao mein
Tabhi paar jane ka hosla nahi ho raha

Teri qaid se mein yunhi riha nahi ho raha
Meri zindagi tera haq ada nahi ho raha
غزل
تری قید سے میں یو نہی رہا نہں ہو رہا
مری زندگی ترا حق ادا نہیں ہو رہا

ترے جیتے جاگتے اور کوئی مرے دل میں ہے
مرے دوست کیا یہ بہت برا نہیں ہو رہا

مرا موسموں سے تو پھر گلہ ہی فضول ہے
تجھے چھو کے بھی میں اگر ہرا نہیں ہو رہا

کوئی شعر ہے جو میں چاہ کر بھی نہ لکھ سکا
کوئی واقعہ ہے جو رونما نہیں ہو رہا

یہ جو ڈگمگانے لگی ہے تیرے دیے کی لو
اسے مجھ سے تو کوئی مسئلہ نہیں ہو رہا

مجھے علم ہے کہ شگاف ہے میری ناؤ میں
تبھی پار جانے کا حوصلہ نہیں ہو رہا

تری قید سے میں یو نہی رہا نہں ہو رہا
مری زندگی ترا حق ادا نہیں ہو رہا

اپنا تبصرہ بھیجیں