Shab Basar Karni Hai Mehfooz Thikhana Hai Koi

Shab Basar Karni Hai Mehfooz Thikhana Hai Koi

Shab Basar Karni Hai Mehfooz Thikhana Hai Koi
Koi jangal hai yahan pass mein sahra hai koi

Waisay socha tha mohabbat nahi karni mein ne
Iss liye ki keh kabhi pochh hi leta hai koi

Aap ki aankhen to selaab zada khitay hain
Aap ke dil ki taraf dosra rasta hai koi

Janta hoon keh tujhe saath tu rakhtay hain kai
Pochna tha keh tera dhayan bhi rakhta hai koi

Dukh mujhe uss ka nahi hai keh dukhi hai woh shakhs
Dukh to yeh hai keh sabab mere ilawa hai koi

Do minute baith mein bas aainay tak ho aaon
Uss mein iss waqt mujhe dekhne aata hai koi

Khauf bola koi hai jis ko bulana hai bula
Dair tak soch ke mein zor se cheekha hai koi

Shab basar karni hai mehfooz thikhana hai koi
Koi jangal hai yahan pass mein sahra hai koi
غزل
شب بسر کرنی ہے محفوظ ٹھکانہ ہےکوئی
کوئی جنگل ہے یہاں پاس میں صحرا ہے کوئی

ویسے سوچا تھا محبت نہیں کرنی میں نے
اِس لئے کی کہ کبھی پوچھ ہی لیتا ہے کوئی

آپ کی آنکھیں تو سیلاب زدہ خطے ہیں
آپ کے دل کی طرف دوسرا رستہ ہے کوئی

جانتا ہوں کہ تجھے ساتھ تو رکھتے ہیں کئی
پوچھنا تھا کہ ترا دھیان بھی رکھتا ہے کوئی

دکھ مجھے اس کا نہیں ہے کہ دکھی ہے وہ شخص
دکھ تو یہ ہے کہ سبب میرے علاوہ ہے کوئی

دومنٹ بیٹھ میں بس آئینے تک ہو آؤں
اُس میں اِس وقت مجھے دیکھنے آتا ہے کوئی

خوف بولا کوئی ہے جس کو بلانا ہے بُلا
دیر تک سوچ کے میں زور سے چیخا ہے کوئی

شب بسر کرنی ہے محفوظ ٹھکانہ ہےکوئی
کوئی جنگل ہے یہاں پاس میں صحرا ہے کوئی

اپنا تبصرہ بھیجیں