Chota Sa Aik Gaon Tha Jis Mein

Chota Sa Aik Gaon Tha Jis Mein

Chota Sa Aik Gaon Tha Jis Mein
Diye thay kam aur bahut andhera

Bahut sajar thay thoray ghar thay
Jin ko tha doori nay ghira

Itni bari tanhai thi jis mein
Jagta rehta tha dil mera

Bahut qadeem firak tha jis mein
Aik moqarar had se agay
Soch na sakta tha dil mera

Aisi soorat mein phir dil ko
Dehaan ata kis khwab mein tera

Raaz jo had se bahar mein tha
Apna ap dekhata kaise

Sapnay ki had thi akhir
Sapna agay jata kaise

Chota Sa Aik Gaon Tha Jis Mein
Diye thay kam aur bahut andhera
غزل
چھوٹا سا ایک گاؤں تھا جس میں
دیے تھے کم اور بہت اندھیرا

بہت شجر تھے تھوڑے گھر تھے
جن کو تھا دوری نے گھیرا

اتنی بڑی تنہائی تھی جس میں
جاگتا رہتا تھا دل میرا

بہت قدیم فراق تھا جس میں
ایک مقرر حد سے آگے
سوچ نا سکتا تھا دل میرا

ایسی صورت میں پھر دل کو
دھیان آتا کس خواب میں تیرا

راز جو حد سے باہر میں تھا
اپنا آپ دیکھتا کیسے

سپنے کے لیے حد تھی آخر
سپنا آگے جاتا کیسے

اپنا تبصرہ بھیجیں